تازہ ترین
نوشہرہ، پی ٹی آئی مارچ میں شامل بعض کارکن فوٹو سیشن کے بعد آدھے راستوں سے واپسواٹس ایپ پر جلد ‘وائس نوٹ’ بھی اسٹیٹس پر لگانا ممکن ہوگاپاکستان میں پہلے یوٹیوب برانڈ کاسٹ کا انعقاداعظم سواتی کے پاس ثبوت ہیں تو پیش کریں، ہم ساتھ کھڑے ہوں گے، فیصل کریم کنڈیحکومت عوامی فیصلے کے سامنے سرتسلیم خم کرے، فواد چودھریپاکستان پراپرٹی ایکسپو دبئی کے لئے سوشل سینٹر شارجہ میں تقریب، شرکاء کے اعزاز میں عشائیہاپنے فرائض ایمانداری اور انصاف کیساتھ ادا کرنے کی توفیق پر اللہ کا شکر ہے، جنرل ندیم رضاایسوسی ایشن آٖف بلڈرز اینڈ ڈیولپرز(آباد) کے عہدیداروں نے نئے تعیناتناظم آباد میں نوجوان نے لڑکی کو تیز دھار آلے سے زخمی کر دیاملک میں آج سونے کی قیمت میں کوئی تبدیلی نہیں ہوئیگورنرسندھ سے آئی جی سندھ پولیس غلام نبی میمن کی گورنر ہاﺅس میں ملاقاتپاکستان ایسوسیشن دبئی کی جانب سے یو اے ای کے قومی دن کے حوالے سے شاندار تقریباوورسیز پاکستانیز کمیشن یو اے ای کی جانب سے شارجہ میں عشائیہ کا اہتمامفیصلے بند کمروں اور بیرون ملک نہیں ہوں گے، اسد عمردنیا کی دوسری بڑی گولڈ فِش برطانیہ میں دریافت ہو گئیسردی سے متاثرینِ سیلاب کی مشکلات بڑھ رہی ہیں: خواجہ آصفموسمیاتی تبدیلی سے متعلق اہم معاہدے پوری دنیا کی جیت ہے، بلاول بھٹوتیسری ٹیبل ٹینس چییمپئن شپ لیگ کی اوپنننگ سرمنی کراچی کے مقامی جیم خانہ میں منعقد کی گئصدر مملکت عارف علوی چیئرمین تحریک انصاف عمران خان سے ملاقات کے بعد اسلام آباد روانہجی ایچ کیو سے عمران خان کو اجازت مل گئی

سندھ میں تعلیمی بہتری کے لیے قابل رہنما کا ہونا ضروری ہے۔

سندھ میں یونیورسٹیوں کا بحران اور ان کے سربراہوں کے انتخاب کا عمل

رحمت اللہ برڑو

آج ایک خبر سامنے آئی کہ (وائس چانسلرز کی تقرری کے معیار کو سندھ ہائی کورٹ سکھر بنچ میں چیلنج کر دیا گیا ہے!!
خبر پڑھ کر ذہن میں سینکڑوں سوالات گردش کر رہے ہیں کہ آخر ہمارے تعلیمی اداروں اور خاص طور پر مدارس، یونیورسٹی یا دارالعلوم میں سرکاری سطح پر بحران کیوں ہے؟! اس کی وجوہات کیا ہیں؟ ان وجوہات کے پیچھے کون ہے اور اس کی وجوہات کیا ہیں؟ وغیرہ وغیرہ
مثال کے طور پر ایک وجہ یہ ہو سکتی ہے کہ یونیورسٹی کا سربراہ نااہل ہے؟ ڈیوٹی چور۔ کیا وہ خود کام نہیں کر سکتا؟ اس نے کام چلانے کی ذمہ داری کسی اور پر ڈال دی ہے۔ ایسے سوالات پوچھے جا سکتے ہیں؟!!
کیا ممکن ہے یہ سوال ہو کہ وہ خود چور ہے اور کرپشن کی وجہ سے غلط کام کر کے ادارے کے مستقبل اور طلباء کے مستقبل سے کھیل کر کوئی بحران پیدا کر سکتا ہے یا پیدا کر سکتا ہے؟!
تاہم اس طرح کی جھوٹی کہانیاں منظر عام پر آئیں تو ہمیں کچھ چیزوں کا جائزہ لینا پڑا۔ مثال کے طور پر، بحران اور بہتر تعلیم حاصل کرنے کے لیے، ایک اچھا استاد، ایک اچھا منتظم، ایک اچھا انتظام اور مالیاتی انتظامیہ کا تجربہ کار سربراہ ہونا ضروری ہے اور یہ قانون میں بھی جانا جاتا ہے۔
حکومت سندھ کے باضابطہ نوٹیفکیشن میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ مذکورہ عہدے کے لیے تعلیم، انتظامیہ، فنانس اور مینجمنٹ کا تجربہ رکھنے والا امیدوار بھی قابل قبول ہوگا۔
اس وقت ایسے کرداروں کا انتخاب کیا جاتا ہے تو ان یونیورسٹیوں میں بحران اور سکینڈل کیوں ہیں؟ کیا تعلیم کے پیچھے کوئی دشمن طاقت تو نہیں؟ کیا پبلک سیکٹر کے تعلیمی اداروں کے معیاری تعلیمی بحران کے پیچھے کوئی پرائیویٹ سیکٹر یا عوام دشمن، تعلیم دشمن قوتیں نہیں، اداروں میں مالی وسائل کی ابتری کے پیچھے کوئی نجی شعبہ یا عوام دشمن، تعلیم دشمن قوتیں نہیں؟ ? جھوٹ دوسروں کی طرح سب سوالوں کے ساتھ نکلتا ہے؟!!
اس کے علاوہ جب اس حوالے سے ادارہ جاتی سطح پر معلومات حاصل کی گئیں تو معلوم ہوا کہ حکومت اور انتظامیہ میں اس طرح کے گٹھ جوڑ کی وجہ سے انتظامی اور قانونی تبدیلیاں یا ترامیم ہوئی ہیں جن کے تحت اہل افراد، ایماندار، اہل افراد یا تدریسی عمل۔ کسی تجربہ کار کا آگے آنا مشکل نہیں لیکن روکنے کی کوشش ضرور کی گئی ہے!!

مثال کے طور پر سندھ میں یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز (VCs) کے لیے لازمی قرار دیا گیا کہ ان کے پاس پی ایچ ڈی ہونا ضروری ہے۔
باقی حالات پہلے بھی تھے اور اب ہیں۔
اس کے علاوہ، انٹرویو گریڈ 22 کے امیدوار کے لیے ہو گا، انٹرویو لینے والے کا اسی گریڈ کا ہونا چاہیے جو کہ اعلیٰ گریڈ کا ہو۔ لیکن اس وقت قانون کے مطابق جو سرچ کمیٹی قائم کی گئی ہے اس میں گریڈ 20 اور 21 کے افسران ہیں جن کی بھی اکثریت ہوگی۔ دو پرائیویٹ ممبرز دیے جاتے ہیں!! دریں اثنا، سرچ کمیٹی کی سربراہی سندھ ہائر ایجوکیشن کمیشن کے چیئرمین کریں گے، جس کے آفیشل ممبران یونیورسٹی کے سیکریٹری اور بورڈ ممبر ہوں گے۔ سیکرٹری کالجز ایجوکیشن سندھ بھی ممبر ہوں گے۔ اس کے علاوہ سیکریٹری/ای ڈی سندھ ہائر ایجوکیشن کمیشن اور پرائیویٹ سائیڈ سے دو آپریٹو ممبران بھی سرچ کمیٹی میں دیے گئے ہیں۔

اب سوال یہ ہے کہ سندھ حکومت نے چند روز قبل سندھ کی یونیورسٹیوں میں وائس چانسلر کی تقرری کے لیے اشتہار دیا تھا جس میں پی ایچ ڈی کی شرط جو کہ اس کی اہلیت سے پہلے رکھی گئی تھی، قانون میں ترمیم کرکے ایک بل بنایا گیا ہے۔ سندھ اسمبلی سے مارچ 2022 کی سرچ کمیٹی بنانے کی منظوری اور پی ایچ ڈی کی شرط بھی اشتہار سے نکال دی گئی!!
ان تمام باتوں پر غور کیا جائے تو سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ہمارے صوبہ سندھ میں حکومت اور انتظامیہ میں کچھ ایسے عناصر نے انجکشن لگا رکھا ہے جنہوں نے سندھ کے تعلیمی اداروں کا تعلیمی اور انتظامی معیار تباہ کر دیا ہے۔ اس کے پیچھے یہ ضروری ہے کہ ان کے پاس عوام دشمن اور سندھ دشمنی کے سوا کچھ نہیں ہے۔
ہم سمجھتے ہیں کہ وہ سرکاری اداروں میں اگر کرپشن ہے تو گویا تعلیم سے نفرت کر کے قوم سے نفرت کر رہے ہیں!!
ہم یہاں صرف یہ کہہ سکتے ہیں یا مشورہ دے سکتے ہیں کہ سندھ کے تعلیمی اور قومی اداروں کے تحفظ کے لیے حکمرانوں کو شفافیت کا ساتھ دینا ہو گا تاکہ یونیورسٹیوں کا معیار بین الاقوامی معیار کے مطابق رکھا جا سکے۔ بہترین ماہر تعلیم و تعلیم کو قوم اور دھرتی کے ساتھ آگے لانا چاہیے 55 کروڑ کے معاوضے کے VC جہازوں کو روکنا ہو گا۔ سرچ کمیٹی میں دیانتدار افراد یا بہترین کردار کے افسران پر مبنی کمیٹی بنائی جائے۔ یہاں گریڈ 21 کا افسر گریڈ 22 کے VC کا انٹرویو لیتا ہے۔ یہ کیسے ہو گا!!؟؟ کتنا ظالم !! چیئرمین ہیک سندھ سیاسی اثر و رسوخ میں ہیں اور سرچ کمیٹی میں ان کے ماتحت ارکان کو اکثریت دیتے ہیں!!! پرائیویٹ طور پر شریک ممبران دو دیتے ہیں!!! ماتحتوں کے لیے چیئرمین کی مخالفت کیسے ممکن ہے!!
یا یہ کیسے ممکن ہے کہ دو پرائیویٹ شریک ممبران اکثریت کی مخالف رائے کو چار کے مقابلے میں رکھ سکیں!!؟؟
تو ہم سب سمجھتے ہیں۔
مذکورہ مجموعہ اور قانون سازی یا سرچ کمیٹی اور اشتہار سے کسی بھی وی سی شپ کے امیدوار کی اہلیت سے پی ایچ ڈی کی شرط ختم کرنے کے لیے کافی ہے، باقی کیا رہ گیا ہے!!
اس لیے ایسا نظام یا ڈھانچہ نئے سرے سے ترتیب دیا جائے اور سندھ کے تعلیمی اداروں کو بچایا جائے۔

About قومی مقاصد نیوز

تبصرہ کریں

آپ کی ایمیل یا ویبشایع نہیں کی جائے گی. لازمی پر کریں *

*

Translate »