تازہ ترین
ہائی بلڈ پریشر کے شکار افراد میں ظاہر ہونے والی علاماتسابق وزیر اعظم عمران خان کی حمایت میں ملک گیر مظاہروں کے بعد بیرون ملک بھی مظاہروں کا سلسلہ جاریعمران کے فونز چوری ہونے کا معاملہ، سی سی ٹی وی فوٹیجز میں گمشدگی کے شواہد نہ مل سکےحکومت کا چیئرمین نیب کو ہٹانے کا فیصلہکراچی دھماکا: وزیراعظم کا وزیراعلیٰ کو فون، ہر ممکن تعاون کی پیشکشملک میں ڈالر 196 روپے کا ہوگیاآرٹیکل 63 اے کی تشریح کیلئے صدارتی ریفرنس پر سماعت مکمل، فیصلہ آج سنایا جائیگاخشک سالی میں گھرے چولستان کے باسی قطرہ قطرہ پانی کو ترس گئےکراچی کے علاقے کھارادر میں دھماکا،خاتون جاں بحق، 12 افراد زخمیکراچی کے علاقے کھارادر میں دھماکے کی اطلاعپانی کی قلت، دریائے سندھ بعض مقامات پر صحرا بن گیاسیسی میں کام کرنے والے نجی سیکورٹی گارڈز کی کم سے کم اجرت 25 ہزار کردی گئی: سعید غنیروپے کے مقابلے میں ڈالر کی اونچی اڑان جاری، آج کتنا مہنگا ہوا؟شیخ محمد بن زید سے شارجہ کے المرشدی قبیلے کے سربراہ قاسم المرشدی کی تعزیتعمران خان کے جان کے خطرے سے متعلق بیان پر جوڈیشل کمیشن بنانے کی پیشکشعمران خان کی سیکیورٹی کیلئے پولیس، ایف سی کی بھاری نفری تعیناتادارہ مداخلت کرے، ٹیکنوکریٹ حکومت لائے اور ستمبر میں الیکشن کرائے: شیخ رشیدسلیکٹڈ وزیر اعظم سے نجات بیرونی سازش نہیں ، جمہوری عمل تھا، بلاولوزیراعظم شہباز شریف کی شیخ خلیفہ کی وفات پر یو اے ای کے صدر شیخ محمد بن زید النہیان سے تعزیتنئی حکومت کے دعووں کے برعکس آٹا،گھی،گوشت اوردالیں سمیت بڑہتی ہوئی مہنگائی باعث تشویش ہے: محمد حسین محنتی

کارٹلائز یشن میں ملوث افراد ہمیشہ حکومتوں کا حصہ رہے ہیں، سراج الحق

فائل فوٹو

لاہور، امیر جماعت اسلامی پاکستان سراج الحق نے کہا ہے کہ کارٹلائز یشن میں ملوث افراد ہمیشہ حکومتوں کا حصہ رہے ہیں۔

پی ٹی آئی نے تبدیلی کا نعرہ لگایا مگر کارٹلائزیشن کو نہ روک سکی۔ حکومت کا کسی مسئلے پر نوٹس کا مطلب اس کا سواستیاناس کرنا ہے۔ حکومتی گاڑی کو اسی طرح ریورس گیئر لگا رہا تو ملک خدانخواستہ کھائی میں جا گرے گا۔ عوام مشکل ترین دور سے گزر رہے ہیں۔ پی ٹی آئی حکومت نے بحرانوں کو کم کرنے کی بجائے اضافہ کیا۔ تین سال گزر گئے اگر کسی ایک شعبہ میں بھی بہتری ہوئی تو حکومت اسے سامنے لائے۔ وزیراعظم اور ان کی ٹیم غیر سنجیدہ ہے۔ پنجاب میں بیڈ گورننس عروج پر ہے۔ جنوبی پنجاب سے متعلق ڈرامائی فیصلے کیے گئے۔ پسماندہ علاقوں میں حالات اندازوں سے بھی بدتر ہیں۔ ملک میں لاکھوں لوگوں کو پینے کا صاف پانی تک میسر نہیں۔ حکومت سے مطالبہ کرتا ہوں کہ کم از کم رمضان المبارک کے مہینے میں اضلاع اور تحصیل لیول پر بہتر مینجمنٹ کے ذریعے لوگوں کو اشیائے خورونوش کی کم قیمت پر فراہمی یقینی بنائے۔ جماعت اسلامی کی برادر تنظیمات اور کارکنان ملک کے کونے کونے میں بے سہارا اور غریبوں کی استعداد سے بڑھ کر مدد کریں۔ اللہ اور اس کے رسولؐ کی تعلیمات گھر گھر پہنچائی جائیں۔ صدقات و زکوٰۃ کے کلچر کو عام کیا جائے۔ مسلمان امن و اخوت کا پرچار کریں۔ اللہ کے دین کو غالب کرنے کے لیے مشترکہ جدوجہد کی ضرورت ہے۔ پاکستان میں اسلامی نظام لائے بغیر چارہ نہیں۔ آزمودہ لوگوں سے عوام تنگ آ چکے ہیں۔ نوجوان ملک کی کشتی کو بھنور سے نکالنے کے لیے بھرپور جدوجہد کریں اور جماعت اسلامی میں شامل ہوں۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے منصورہ میں کارکنان سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

سراج الحق نے کہا کہ گزشتہ ڈھائی تین برسوں سے پی ٹی آئی حکومت جس مسئلے کا نوٹس لیتی ہے وہ مزید خراب ہو جاتا ہے۔ چینی کو ہی لے لیجیے حکومت نے سبسڈی کا اعلان کیا تو قیمت ساٹھ سے ستر روپے فی کلو ہو گئی۔ تحقیقات کا اعلان ہوا تو پرائس مزید بڑھ گئی اور وزیراعظم کے نوٹسز لینے کے مرحلے سے گزر کر آج چینی 115روپے فی کلو ہو چکی ہے۔ مرغی کے گوشت کی قیمتیں آسمان سے باتیں کر رہی ہیں۔ گھی 200روپے فی کلو سے بڑھ کر 400کے قریب پہنچ گیا ہے۔ وزیراعظم اور ان کی ٹیم نے معیشت کو بہتر کرنے کے لیے کوئی ٹھوس حکمت عملی تشکیل نہیں دی۔ آئی ایم ایف کی ڈکٹیٹ کی گئی پالیسیوں سے ملک میں مہنگائی کا طوفان آیا اور بے روزگاری میں کئی گنا اضافہ ہوا۔ اب تو وزیراعظم خود اعتراف کرتے ہیں کہ ان کی حکومت عوام کو ریلیف پہنچانے میں ناکام رہی۔ پی ٹی آئی نے آدھی سے زیادہ مدت اقتدار کا مزہ لے لیا ہے۔ حکومت سے کوئی توقع نہیں کہ وہ حالات میں بہتری لانے کوئی سنجیدہ حکمت عملی تشکیل دے سکے گی۔انھوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نے تبدیلی اور مدینہ ریاست کے دعوے کیے مگر گزشتہ تین برسوں میں جو اقدامات کیے وہ سراسر ان وعدوں کے برعکس تھے۔

سراج الحق نے کہا کہ پاکستان رمضان کے مقدس مہینے میں آزاد ہوا۔ اس خطے کے کروڑوں مسلمانوں نے آزادی کے لیے بے پناہ قربانیاں دیں۔ قائداعظم محمد علی جناح نے مسلمانان برصغیر کو یقین دلایا تھا کہ ان کی جدوجہد ایک ایسے ملک کے حصو ل کے لیے جو اسلام کی لیبارٹری بنے گا۔مگر بدقسمتی سے ان کی وفات کے کچھ عرصہ بعد سیکولرازم اور مغرب کے پیروکاروں نے ملک کی نظریاتی اساس کو تباہ کرنا شروع کر دیا۔ کبھی مارشل لاز اور کبھی نام نہاد جمہوریت کے تجربات ہوئے۔ گزشتہ 73برسوں میں ملک مختلف سیاسی تجربات کی بھینٹ چڑھا مگر عوام کے مسائل حل نہ ہو سکے۔

امیر جماعت اسلامی نے کہا کہ پاکستان کے مسائل کا حل قرآن و سنت کے نظام کے نفاذ میں ہے۔ عوام بھی اسلامی نظام چاہتے ہیں۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ اس فرسودہ اور کرپٹ نظام سے ایک مربوط اور موثر جدوجہد کے ذریعے چھٹکارا حاصل کیا جائے۔ انھوں نے کہا کہ جماعت اسلامی کے ملک بھر میں کارکنان رمضان کے مقدس مہینے میں ملک میں قرآن و سنت کی تشکیل و اشاعت کے لیے بھرپور محنت کریں۔

About قومی مقاصد نیوز

تبصرہ کریں

آپ کی ایمیل یا ویبشایع نہیں کی جائے گی. لازمی پر کریں *

*

Translate »