تازہ ترین
افسران کے تبادلے کا معاملہ، وزیراعلیٰ سندھ کی افسران کو چارج نہ چھوڑنے کی ہدایتعمران خان کی حکومت گرانے کیلیے تمام آئینی وقانونی راستے اختیار کرینگے، پیپلز پارٹیطالبان نے بدھا مجسموں کی جگہ اور قدیم یادگاروں کو سیاحت کیلئے کھول دیاروپے کی قدر میں زبردست کمی کے باوجود درآمدات بڑھ رہی ہیں، میاں زاہد حسینعاصمہ جہانگیر فاؤنڈیشن نے نوازشریف کی تقریر پرحکومتی تنقید مسترد کردیائیرپورٹ پر مسافر کے بیگ سے کروڑوں روپے کی ہیروئن برآمدکراچی سمیت سندھ میں سی این جی اسٹیشنز کو ڈھائی ماہ کیلئے کی فراہمی بندججز کے سیمینار میں چیف گیسٹ اسے بلایا گیا جسے سپریم کورٹ نے سزا دی: وزیراعظمیو اے ای میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کردی گئیآڈیو لیک: فرض کریں ٹیپ درست ہے تو اصل کلپ کس کے پاس ہے؟جسٹس اطہر من اللہ’کورونا کے نئے ویرینٹ کا علم نہیں، تعلیمی سرگرمیاں جاری رکھنا چاہتے ہیں‘عمران خان کو نوجوان اقتدار میں لائے تھے وہی بھگائیں گے، سراج الحقاومی کرون سے متاثرہ مریضوں میں معمولی علامات ہیں، جنوبی افریقا میڈیکل ایسوسی ایشنمال و دولت نہیں بلکہ تعلیم سب سے بڑی نعمت ہے، محمد حسین محنتیحکومت نے آئی ایم ایف شرائط کے تحت منی بجٹ لانے کا فیصلہ کرلیااین اے 133 ضمنی الیکشن: ووٹرز سے قرآن پر حلف لیکر ووٹ خریدنے کے الزاماتگرین لائن منصوبہ کب آپریشنل ہو گا؟ اسد عمر نے کراچی والوں کو خوشخبری سنا دیمال دولت نہیں انسان کے اندر غیرت ضروری ہے، وزیراعظماومی کرون وائرس کا خدشہ: سندھ میں بوسٹر ڈوز لازمی قرار‘نسلہ ٹاور کے این او سی کو نہیں مانا گیا تو کل نکاح نامے پر بھی سوال اٹھ جائیگا’

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نیب راولپنڈی میں پیش ہوگئے

وزیراعلیٰ سندھ کی پیشی کے موقع پر نیب اولڈ ہیڈ آفس کے باہر سیکیورٹی کے سخت انتظامات تھے اور پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی ہے۔

نیب نے وزیراعلیٰ سندھ کو سولر لائٹس کیس میں غیر قانونی ٹھیکے دینے اور سندھ روشن پروگرام کے کیس میں طلب کیا تھا۔

نیب میں پیشی کے بعد میڈیا سےگفتگو کرتے ہوئے مراد علی شاہ نے کہا کہ نیب کے سوالات کے جواب دیے، سوال تھا کہ سولر اسکیم بجٹ میں نہیں تھی بعد میں منظوری دی گئی، پوچھا گیا کہ بجٹ میں جو اسکیم شامل نہیں تھی منظوری کیوں دی گئی ؟

مراد علی شاہ نے بتایا انہوں نے جواب دیا کہ آئین کے مطابق بجٹ میں شامل نہ ہونے والی اسکیم کی بھی اجازت دی جاسکتی ہے، آئین اور قانون کے مطابق سولر اسکیم کی منظوری دی گئی۔

ان کا کہنا تھا کہ نیب کے سوالات کے جواب دیے اور کوشش کی کہ آئینی حقیقت سے ان کو آگاہ کریں ، ابھی سوالنامہ دیا نہیں لیکن کہا گیا کہ مجھے سوالنامہ دیا جائے گا۔
وزیراعظم کو پورے ملک اور انسانی جانوں کا سوچ کر فیصلے کرنے چاہئیں‘
کورونا سے متعلق سوال پر وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ جہاں ایس او پیز پر عمل درآمد نہیں ہورہا ہے اس کا الزام لوگوں کو نہیں دوں گا، حکومت کی جانب سے کورونا وبا سے متعلق مکس پیغامات عوام تک گئے اس سے متعلق عوام کو ایک پیغام جانا چاہیے کہ یہ سنجیدہ مسئلہ ہے ۔

انہوں نے مزید کہا کہ کراچی میں کورونا وبا زیادہ ہے،تمام اقدامات طبی ماہرین کی مشاورت سے کیے، وزیراعظم کو پورے ملک اور انسانی جانوں کا سوچ کر فیصلے کرنے چاہئیں، میں کسی فیصلے میں وفاقی حکومت کے خلاف نہیں گیا، این سی سی میں فیصلے کے باوجود کچھ صوبوں نے مارکیٹیں کھولیں، باقی صوبوں نے مارکیٹیں کھولیں تو عدالت نے ہم سے مارکیٹوں سے متعلق پوچھا۔

مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی قیادت نے اسٹیل ملز میں کھڑے ہوکر کہا تھا کہ اگر ملازمین کو حق نہیں ملا تو ان کے ساتھ کھڑا ہوں گا، ہم اسٹیل ملز ملازمین کے ساتھ کھڑے ہیں۔

واضح رہےکہ وزیراعلیٰ سندھ پر سولر لائٹس کیس میں غیر قانونی ٹھیکے دینے کا الزام ہے اور سندھ روشن پروگرام میں نیب 298 ملین روپے ریکور کر چکا ہے، منصوبے میں شامل دو کمپنیوں نے پلی بارگین میں رقم واپس کی تھی جب کہ 4 ملزمان بھی اس کیس میں پلی بارگین کرچکے ہیں۔

About قومی مقاصد نیوز

تبصرہ کریں

آپ کی ایمیل یا ویبشایع نہیں کی جائے گی. لازمی پر کریں *

*

Translate »