تازہ ترین
آڈیو لیک معاملہ، قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات نے ثاقب نثار کو طلب کرلیاالیکشن کمیشن کا ووٹ چیک کرنیوالی ایس ایم ایس سروس مفت کرنے کا فیصلہٹی ایل پی کے سربراہ کا آئندہ الیکشن میں بھرپور طریقے سے حصہ لینے کا اعلانہم سندھ میں بلدیاتی انتخابات مارچ 2022 چاہتے ہیں، مردم شماری پر ہمارے آج بھی تحفظات ہیںسندھ ہائیکورٹ نے فریال تالپورکوبیرون ملک جانے کی اجازت دے دیپولیس اہلکار کا گھر پر حملہ، خاتون سے اہل خانہ کے سامنے زیادتیکراچی: نسلہ ٹاور کے باہرمتاثرین اور بلڈرز کا احتجاج، پولیس کا لاٹھی چارج اور شیلنگپاکستان عالمی مالیاتی ادارے کے نرغے میں پھنس چکا ہے، میاں زاہد حسینپاک بنگلادیش ٹیسٹ کے دوران اسٹیڈیم کے باہرآتشزدگی، دھواں گراؤنڈ میں داخلپیٹرول پر تمام ٹیکس ختم کردیے، تیل کی قیمت میں کمی کا سب فائدہ عوام کو دینگے‘ملک میں گیس کا بحران سنگین، شہریوں کیلئے روز ہوٹل سے کھانا خریدنا مشکل ہو گیابھارت نے پاکستان سے فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت مانگ لیحکومت سے مذاکرات کامیاب ہونے پر پیٹرولیم ڈیلرز نے ہڑتال ختم کردیمہنگی بجلی، قلت کےساتھ مہنگاپیٹرول پی ٹی آئی ایم ایف ڈیل کے تحفے ہیں، بلاولپیٹرول کتنا مہنگا ہونے والا ہے؟ بری خبر آگئیعدلیہ کو بدنام کرنے کا الزام، مریم اور شاہد خاقان کیخلاف درخواست پر سماعت کل ہوگیبلاول بھٹو زرداری سے پاک افغان امور پر برطانوی وزیراعظم کے نمائندے نائجل کیسی کی ملاقاتسراج الحق کی افغانستان کے وزیرپٹرولیم اور مذکراتی ٹیم کے رکن ملا شہاب الدین دلاور سے ملاقات کیسندھ میں آٹے کی کوئی کمی نہیں ہےروٹیشن پالیسی: وزیراعلیٰ سندھ جزوی طور پر افسران کے تبادلوں پر رضامند ہوگئے

میں دریافت ہونے والا مچھلی کا ڈھانچہ 5 کڑور 40 لاکھ سال قدیم نکلا

امریکا کی مشی گن یونیورسٹی کے ماہرین کے مطابق پاکستان میں دریافت ہونے والا مچھلی کا ڈھانچہ 5کڑور 40 لاکھ سال قدیم ہے۔

 مشی گن یونیورسٹی کے ماہرین کا ایک تحقیقی مقالے میں کہنا ہے کہ پاکستان میں دریافت ہونے والا مچھلی کا نایاب ڈھانچہ  5کڑور 40 لاکھ سال پرانا ہے جب کہ  اسی نسل کی دوسری قسم کی مچھلی کا ایک اورڈھانچہ بیلجیم میں بھی ملا ہے۔

ماہرین کے مطابق بیلجیم میں ملنے والا ڈھانچہ 4 کروڑ 10لاکھ سال پرانا ہے۔

مچھلی کے اوپری حصے کے اکلوتے بڑے دانت  اور دیگر نوکیلے اور بڑے دانتوں کے باعث اسے ‘چڑیل’ سے منسوب کیا گیا ہے۔

اس نسل کی مچھلی آج بھی سمندر میں پائی جاتی ہیں لیکن ارتقاء پذیر ی کے بعد اب اس کے دانت بڑے نہیں ہوتے اور  اب یہ پہلے کے مقابلے میں کہیں چھوٹی بھی ہوتی ہے۔

رپورٹ کے مطابق  پاکستان میں اس نسل کی مچھلی دوسرے نمبر پر بڑی تعداد میں پائی جاتی ہے اور اسے اینکوویز (ANCHOVIES) جب کہ پاکستان میں عام طور پر سمورا مچھلی کہا جاتا ہے۔

امریکی ماہرین کا کہنا ہے کہ مچھلی کا نایاب ڈھانچہ گذشتہ 40 سالوں سے یونیورسٹی کے میوزیم میں رکھا ہوا تھا جو کہ پاکستان میں آثار قدیمہ کی تلاش کے دوران دریافت ہوا تھا۔

مچھلی کے فوسل پر تحقیق کرنے والے پی ایچ ڈی کے طالب علم کی نظر اتفاقیہ طور پر میوزیم کا جائزہ لینے کے دوران پڑی تھی اور جب اس پر تحقیق کی گئی تو یہ نتائج حاصل ہوئے۔

محکمہ جنگلی حیات(ڈبلیو ڈبلیو ایف) پاکستان کے تکنیکی مشیر معظم خان کا کہنا ہے کہ دنیا بھر میں یہ مچھلی پِزا میں استعمال ہوتی ہے اور  اسی نسل کی مچھلی کو دنیا بھر میں فش فارمنگ میں چارے کے طور پر بھی استعمال کیا جاتا ہے۔

معظم خان کا مزید کہنا تھا کہ  یہ مچھلی پانی سے کیڑے چھان کر کھاتی ہے۔

About قومی مقاصد نیوز

تبصرہ کریں

آپ کی ایمیل یا ویبشایع نہیں کی جائے گی. لازمی پر کریں *

*

Translate »