تازہ ترین
ٹرک سے 400 کلو سے زائد چرس بر آمد، ملزم گرفتارافسران کے تبادلے کا معاملہ، وزیراعلیٰ سندھ کی افسران کو چارج نہ چھوڑنے کی ہدایتعمران خان کی حکومت گرانے کیلیے تمام آئینی وقانونی راستے اختیار کرینگے، پیپلز پارٹیطالبان نے بدھا مجسموں کی جگہ اور قدیم یادگاروں کو سیاحت کیلئے کھول دیاروپے کی قدر میں زبردست کمی کے باوجود درآمدات بڑھ رہی ہیں، میاں زاہد حسینعاصمہ جہانگیر فاؤنڈیشن نے نوازشریف کی تقریر پرحکومتی تنقید مسترد کردیائیرپورٹ پر مسافر کے بیگ سے کروڑوں روپے کی ہیروئن برآمدکراچی سمیت سندھ میں سی این جی اسٹیشنز کو ڈھائی ماہ کیلئے کی فراہمی بندججز کے سیمینار میں چیف گیسٹ اسے بلایا گیا جسے سپریم کورٹ نے سزا دی: وزیراعظمیو اے ای میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کردی گئیآڈیو لیک: فرض کریں ٹیپ درست ہے تو اصل کلپ کس کے پاس ہے؟جسٹس اطہر من اللہ’کورونا کے نئے ویرینٹ کا علم نہیں، تعلیمی سرگرمیاں جاری رکھنا چاہتے ہیں‘عمران خان کو نوجوان اقتدار میں لائے تھے وہی بھگائیں گے، سراج الحقاومی کرون سے متاثرہ مریضوں میں معمولی علامات ہیں، جنوبی افریقا میڈیکل ایسوسی ایشنمال و دولت نہیں بلکہ تعلیم سب سے بڑی نعمت ہے، محمد حسین محنتیحکومت نے آئی ایم ایف شرائط کے تحت منی بجٹ لانے کا فیصلہ کرلیااین اے 133 ضمنی الیکشن: ووٹرز سے قرآن پر حلف لیکر ووٹ خریدنے کے الزاماتگرین لائن منصوبہ کب آپریشنل ہو گا؟ اسد عمر نے کراچی والوں کو خوشخبری سنا دیمال دولت نہیں انسان کے اندر غیرت ضروری ہے، وزیراعظماومی کرون وائرس کا خدشہ: سندھ میں بوسٹر ڈوز لازمی قرار

چینی برآمد کرنے کیلئے ملز مالکان نے اسد عمر کو کیا دھمکی دی؟

حکومت چینی بحران پر وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کی تحقیقاتی رپورٹ کا فرانزک کرنے والے کمیشن کی حتمی رپورٹ منظر عام پر لے آئی ہے جس کے تحت جہانگیر ترین، مونس الٰہی، شہباز شریف اور ان کے اہل خانہ، اومنی گروپ اور خسرو بختیار کے بھائی عمرشہریار کی چینی ملز نے پیسے بنائے۔


اب وزیراعظم کو جمع کرائے گئے اس کمیشن کی رپورٹ کی مزید تفصیلات سامنے آئی ہیں اور انکشاف ہوا ہے کہ وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے کمیشن کو بتایا کہ شوگر ملز مالکان نے انہیں دھمکی دی تھی کہ اگر چینی برآمد کرنے کی اجازت نہ دی گئی تو کرشنگ سیزن شروع نہیں کریں گے۔

کمیشن کی رپورٹ کے مطابق وفاقی وزیر اسد عمر کمیشن میں پیش ہوئے اور بتایا کہ شوگر ملز مالکان نے چینی کی برآمد کی اجازت نہ دینے پر دھکمی دی،شوگر ملز نے دھمکی دی کہ اجازت نہ دینے پر کرشنگ سیزن شروع نہیں کریں گے۔

کمیشن کے مطابق اسد عمر نے چینی برآمد کرنے کے فیصلے کو درست بھی قرار دیا اور کہا کہ اس وقت ملک میں چینی کا وافر ذخیرہ موجود تھا، چینی کی برآمد کے وقت ملک کو فارن ایکسچینج کی اشد ضرورت تھی، چینی کی برآمد کے فیصلے کے وقت کرشنگ سیزن شروع ہونے والا تھا، برآمد کے فیصلے کے وقت چینی کی قلت کا خدشہ نہیں تھا۔

کمیشن رپورٹ کے مطابق اسد عمر نے کمیشن کو بتایا کہ چینی کی قیمتوں میں اضافے کو برآمد کے باعث قلت سے منسلک نہ کیا جائے،چینی کے ذخیرے کے اعدادوشمار صوبےدیتے ہیں، مستند نہ ہونے کا شبہ نہیں،18ویں ترمیم کے بعد سبسڈی کا معاملہ صوبوں کے پاس ہے،چینی کی ایکسپورٹ پر سبسڈی کا مینڈیٹ وفاقی حکومت کا نہیں، چینی کی قیمتوں میں اضافہ کارٹیلائزیشن سے ہوا۔

کمیشن رپورٹ کے مطابق کمیشن نے سبسڈی کو صوبائی معاملہ قرار دینے کے اسد عمر کے بیان پر عدم اطمینان کا اظہار کیا۔

رزاق داؤد کے جواب پر بھی کمیشن کا عدم اطمینان کا اظہار

About قومی مقاصد نیوز

تبصرہ کریں

آپ کی ایمیل یا ویبشایع نہیں کی جائے گی. لازمی پر کریں *

*

Translate »