تازہ ترین
سعید غنی کی ہتک عزت کی درخواست پر پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل پر فرد جرم عائدراولپنڈی میں شادی ہال کی لفٹ گرگئی، ایک شخص جاں بحق، متعدد زخمیسانحہ مری انتظامیہ کی غفلت سے پیش آیا، انکوائری کمیٹی کی رپورٹصدرمملکت نے ایف بی آر کی انتظامی ناانصافی پر بزرگ شہری سے معذرت کرلیجھوٹ اور غلط بیانی وفاقی وزراء کا وطیرہ بن چکا ہے، امتیاز شیخشریف فیملی حکومت سے چار لوگوں کیلئے ڈیل مانگ رہی ہے، شہباز گل کا دعویٰشہزادہ ہیری نے گارڈز واپس لینے کیلئے برطانوی حکومت کیخلاف مقدمے کی دھمکی دیدیانسٹا گرام اب ٹک ٹاک کو اپنے پلیٹ فارم پر شامل کرنے کو تیارمیں عمران نیازی کو رات کو ڈراؤنے خواب کی طرح آتا ہوں: شہباز شریففیکٹری میں زہریلی گیس پھیلنے سے چینی شہری ہلاک، 2 متاثردنیا بھر میں اومی کرون سونامی کی طرح پھیلنے لگالی مارکیٹ کی عمارت سے اینٹی ائیرکرافٹ گن سمیت نیٹو کا جدید اسلحہ برآمد’اب بل نہیں سندھ واپس لیں گے‘، بلدیاتی قانون کیخلاف پی ٹی آئی، MQM اور GDA کا مظاہرہطالبان نے افغان اثاثوں کی بحالی کا مطالبہ کر دیاکورونا: این سی او سی نے پابندیوں کا نفاذ شروع کردیاعلی زیدی پی ٹی آئی کے سیکریٹری اطلاعات احمد جواد کے انکشافات پر صفائی دیں، سعید غنیایس بی سی کے سرٹیفکیٹ کےبغیر نئی عمارات کو یوٹیلیٹی کنکشنز نہ دینے کا حکمکیا منال نے احسن کی دولت کی وجہ سے ان سے شادی کی ہے؟کورونا کیسز: سندھ حکومت کا اسکول کھلے رکھنے کا فیصلہبپن راوت کا ہیلی کاپٹرگرنے کی ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ سامنے آگئی، وجہ کیا تھی؟

سونا سمجھ کر رکھا گیا کئی سال پرانا پتھر اور بھی قیمتی نکلا

آسٹریلیا: آسٹریلیا کے ایک باشندے نے ایک عجیب پتھر کے بڑے سے ٹکڑے کو کئی برس تک اس امید پر اپنے پاس رکھا کہ شاید یہ سونا ہے لیکن یہ پتھر سونا تو ثابت نہیں ہوا تاہم اس سے بھی قیمتی شے نکلا ماہرین نے اسے ’نایاب ترین شہابی پتھر‘ قرار دیا ہے۔

سال 2015ء میں ڈیوڈ ہول کو آسٹریلیا کے ایک پارک سے یہ پتھر ملا تھا جو زنگ آلود سرخی مائل رنگت کے ساتھ بہت بھاری تھا۔ ڈیوڈ اسے مشکل سے اپنے گھر اٹھالائے اور کئی روز تک اس کا زنگ اتارنے یا اس میں سوراخ کرنے کی کوشش کی۔ یہ پتھر میری بورو کے گولڈ فیلڈز کے علاقے سے ملا تھا جو انیسویں صدی میں سونے کی تلاش کا ایک اہم مرکز تھا۔

ڈیوڈ نے پتھر کو کاٹنے، توڑنے اور سوراخ کرنے کے لیے ہرحربہ استعمال کیا۔ انہوں نے طاقتور ڈرل مشین، کٹنگ مشین اور کئی طرح کے تیزاب بھی آزمائے تاکہ اندر سے سونا نکال سکیں۔

میلبورن میوزیم کے ارضیات داں ڈرموٹ ہینری نے بتایا کہ کہ جب شہابیہ زمینی فضا میں داخل ہوا تو ہوا کی رگڑ نے اس کی صورت تشکیل دی۔ ان کے مطابق یہ پتھر غیر معمولی طور پر بھاری تھا۔

لیکن بغور مطالعے کے بعد معلوم ہوا کہ یہ آسمانی پتھر4.6 ارب سال قدیم ہے جس کا وزن 17 کلوگرام ہے۔ ارضیات دانوں نے اسے نایاب ترین شہابی پتھر قرار دیا ہے جس میں فولاد کی غیرمعمولی مقدار موجود ہے۔ اس کے اندر قلمی صورت میں ایک دھاتی معد کونڈریولز موجود ہے جو ایک حیرت انگیز شے ہے۔

لیکن اب بھی معلوم نہ ہوسکا کہ یہ میٹیورائٹ یا شہابی ٹکڑا آخر کہاں سے آیا؟ اورزمین پر کتنے عرصے سے موجود ہے۔ کاربن ڈیٹنگ کے ابتدائی تخمینوں سے معلوم ہوا ہے کہ یہ زمین پر 100 سے 1000 سال سے موجود ہے۔

سائنس دانوں نے اسے ’میری بورو شہابی پتھر‘ کا نام دیتے ہوئے اسے سونے، چاندی اور پلاٹینم سے بھی قیمتی قرار دیا ہے۔

About قومی مقاصد نیوز

تبصرہ کریں

آپ کی ایمیل یا ویبشایع نہیں کی جائے گی. لازمی پر کریں *

*

Translate »