تازہ ترین
دریائے سندھ کی 3 ڈولفنز کو سیٹلائٹ ٹیگس لگاکر دریا میں چھوڑ دیا گیاصدارتی نظام کا شوشہ حکومتی ناکامی اور مہنگائی سمیت عوام کے سلگتے مسائل سے توجہ ہٹانے کی کوشش ہے، محمد حسین محنتیایک ہفتے میں 24 اشیا کی قیمتوں میں اضافہ، مہنگائی کی شرح 19.36 فیصد پرآگئیلمس: ملازمین کے کاموں میں سکندر جونیجو، سرفراز میمن ودیگر رکاوٹ اور بلیک میلنگ کر رہے ہیں: قلندر بخش بوزدارکراچی کی ضروریات کونظراندازکرنا کمزورمعیشت سے کھیلنے کے مترادف ہے، میاں زاہد حسینشرمیلا کی والدہ سے کیا ان کے بینک اکاؤنٹس کا پوچھتی؟ نادیہ خانڈکیتی کے کیس میں شوہر کے سامنے خاتون سے زیادتی کا بھی انکشافلاہور: انار کلی بازار دھماکے کیلئے کتنے دہشتگرد آئے؟ تفصیلات سامنے آ گئیںگرل فرینڈ کی ماں کو گردہ عطیہ کرنے والے شخص کو دھوکا، لڑکی نے کسی اور سے شادی کرلیبھیک مانگنے والی لڑکی پر دکاندار نےگرم گھی پھینک دیاجماعت اسلامی کی جانب سے لاہور بم دھماکے کی مذمتناقص پلاننگ اور تاخیر سےکیےگئے فیصلے سانحہ مری کی اہم وجہ ہیں، تحقیقاتی رپورٹکراچی میں تیسری شاہ اکیڈمی کرکٹ پریمئیر لیگ شروع، چار ٹیموں کے درمیان دلچسب مقابلےپانچ شہروں سے متعلق ریڈالرٹ جاری کیا ہوا ہے، شیخ رشیدکنزیومر موومنٹ غریب عوام کی داد رسی کے لیے جنگی بنیادوں پر کام کرے، محمد حسین محنتیمسلم ممالک ہماری حکومت کو تسلیم کریں، افغان وزیراعظمپریانتھا کو کس نے قینچی ماری اور کس نے لاش جلائی؟ 7 مرکزی ملزمان کا پتا چل گیالاہور میں دھماکا، ایک شخص جاں بحق اور متعدد زخمیایران کے ساتھ مذاکرات پر ہار ماننے کا وقت نہیں، امریکی صدرپاکستان کی پہلی خواجہ سرا ڈاکٹر سارہ گل نے ملک میں ایک نئی تاریخ رقم کی ہے، سعید غنی

گردشی قرضہ ملکی معیشت کے لئے مسلسل خطرہ بنا ہوا ہے: میاں زاہد حسین

فائل فوٹو

پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر ،بزنس مین پینل کے سینئر وائس چیئرمین اور سابق صوبائی وزیر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ ڈیڑھ کھرب سے زیادہ کا گردشی قرضہ ملکی معیشت کے لئے بڑاخطرہ بنا ہوا ہے اور اسے سنگل ڈیجیٹ میں لانے کی تمام کوششیں ناکام ہو گئی ہیں۔

گردشی قرضہ کے بارے میں حکومت کے دعووں اور ایشیائی ترقیاتی بینک کی رپورٹ میں تضاد سے توانائی کے شعبہ کے لئے مشکلات کھڑی ہو سکتی ہیں۔

حکومت کا کہنا ہے کہ گردشی قرضہ کو38 ارب روپے ماہانہ سے کم کر کے12ارب روپے ماہانہ کر دیا گیا ہے جبکہ ایشیائی ترقیاتی بینک نے انکشاف کیا ہے کہ گردشی قرضے میں ماہانہ 21ارب روپے کا اضافہ ہو رہا ہے یعنی وزیر اعظم کو کا رکردگی بڑھا چڑھا کر پیش کی جا رہی ہے۔

میاں زاہد حسین نے بز نس کمیونٹی سے گفتگو میں کہا کہ گردشی قرضہ کے بارے میں متضاد دعووں سے پتہ چلتا ہے کہ توانائی کے اہم شعبہ میں اتنی بہتری نہیں لائی جا سکی ہے جتنا کہ دعویٰ کیا جا رہا ہے۔

حکومت کے بعض وزراءنے تو گردشی قرضہ کو10 ارب روپے ماہانہ تک کم کرنے کا دعویٰ بھی کر ڈالا مگر ایشیائی بینک کی رپورٹ نے ان دعووں کی قلعی کھول کر رکھ دی ہے۔

اے ڈی بی کی رپورٹ اس وقت جاری کی گئی ہے جب حکومت نے بجلی کے نظام کو بہتر بنانے اور چوری پر قابو پانے کے لئے اس بینک سے ایک ارب ڈالر قرضے لینے کا معاہدہ کیا جسکے تحت300 ملین ڈالر پہلی قسط ادا کی جا چکی ۔مکمل ادائیگی تین قسطوں میں کی جائے گی جس کی بنیادی شرط ہر تین ماہ بعد بجلی کی قیمت میں اضافہ ہے۔

]اے ڈی بی کو یہ یقین دہانی بھی کروا دی گئی ہے کہ حکومت نیپرا کو مزید اختیارات دے رہی ہے اور نیپرا ایکٹ میں ترمیم کا کام ماہ رواں میں ہی شروع کر دیا جائے گا جس کے بعد بجلی کی قیمتوں میں کمی بیشی کا اختیار حکومت کے پاس نہیں رہے گا بلکہ اسکا فیصلہ نیپرا کرے گا جبکہ سال رواں کے گردشی قرضے کو 120 ارب روپے سے کم رکھنے کا وعدہ بھی کیا گیا ہے جس کے لئے بجلی کی قیمت میں اضافہ ضروری ہو گا۔

انھوںنے کہا کہ بجلی کی فروخت کے مطابق وصولی یقینی نہیں بنائی جا سکی ہے جبکہ سالانہ200 ارب روپے سے زیادہ کی بجلی کی چوری، بجلی کی ترسیل کا بوسیدہ نظام، ڈسٹری بیوشن کمپنیوں کی ناقص کارکردگی ،کرپشن کک بیکس اور کمیشن گردشی قرضے میں اضافہ کا سبب بن رہے ہیں۔یہ قرضہ بجلی گھروں، ڈسٹری بیوشن کمپنیوں اور آئل کمپنیوں میں گھومتا رہتا ہے جسے ادا کرنے کے لئے حکومت کمرشل بینکوں سے قرضہ لیتی ہے تاکہ ملک میں تیل کی درآمد بند نہ ہو جائے ۔

About قومی مقاصد نیوز

تبصرہ کریں

آپ کی ایمیل یا ویبشایع نہیں کی جائے گی. لازمی پر کریں *

*

Translate »