تازہ ترین
دریائے سندھ کی 3 ڈولفنز کو سیٹلائٹ ٹیگس لگاکر دریا میں چھوڑ دیا گیاصدارتی نظام کا شوشہ حکومتی ناکامی اور مہنگائی سمیت عوام کے سلگتے مسائل سے توجہ ہٹانے کی کوشش ہے، محمد حسین محنتیایک ہفتے میں 24 اشیا کی قیمتوں میں اضافہ، مہنگائی کی شرح 19.36 فیصد پرآگئیلمس: ملازمین کے کاموں میں سکندر جونیجو، سرفراز میمن ودیگر رکاوٹ اور بلیک میلنگ کر رہے ہیں: قلندر بخش بوزدارکراچی کی ضروریات کونظراندازکرنا کمزورمعیشت سے کھیلنے کے مترادف ہے، میاں زاہد حسینشرمیلا کی والدہ سے کیا ان کے بینک اکاؤنٹس کا پوچھتی؟ نادیہ خانڈکیتی کے کیس میں شوہر کے سامنے خاتون سے زیادتی کا بھی انکشافلاہور: انار کلی بازار دھماکے کیلئے کتنے دہشتگرد آئے؟ تفصیلات سامنے آ گئیںگرل فرینڈ کی ماں کو گردہ عطیہ کرنے والے شخص کو دھوکا، لڑکی نے کسی اور سے شادی کرلیبھیک مانگنے والی لڑکی پر دکاندار نےگرم گھی پھینک دیاجماعت اسلامی کی جانب سے لاہور بم دھماکے کی مذمتناقص پلاننگ اور تاخیر سےکیےگئے فیصلے سانحہ مری کی اہم وجہ ہیں، تحقیقاتی رپورٹکراچی میں تیسری شاہ اکیڈمی کرکٹ پریمئیر لیگ شروع، چار ٹیموں کے درمیان دلچسب مقابلےپانچ شہروں سے متعلق ریڈالرٹ جاری کیا ہوا ہے، شیخ رشیدکنزیومر موومنٹ غریب عوام کی داد رسی کے لیے جنگی بنیادوں پر کام کرے، محمد حسین محنتیمسلم ممالک ہماری حکومت کو تسلیم کریں، افغان وزیراعظمپریانتھا کو کس نے قینچی ماری اور کس نے لاش جلائی؟ 7 مرکزی ملزمان کا پتا چل گیالاہور میں دھماکا، ایک شخص جاں بحق اور متعدد زخمیایران کے ساتھ مذاکرات پر ہار ماننے کا وقت نہیں، امریکی صدرپاکستان کی پہلی خواجہ سرا ڈاکٹر سارہ گل نے ملک میں ایک نئی تاریخ رقم کی ہے، سعید غنی

جانئے کشمش کے انیک فوائد

اگر اعتدال میں رہ کر کھایا جائے تو کشمش صحت کے لیے فائدہ مند اور غذا میں شامل کیا جانے والا مزیدار میوہ ہے۔

کشمش سے جسم کو ضروری غذائی اجزا، منرلز حاصل ہوتے ہیں جبکہ کیلوریز اور قدرتی مٹھاس کی شکل میں توانائی بھی ملتی ہے۔

کشمش کو دن بھر کسی بھی وقت کھایا جاسکتا ہے۔

اسے دہی یا کسی چیز کے اوپر سجا کر بھی کھایا جاسکتا ہے اور متعدد غذاﺅں کا حصہ بھی بنایا جاسکتا ہے۔

غذا میں اس سستے میوے کا اضافہ صحت کے لیے کتنا فائدہ مند ہے، وہ درج ذیل ہیں۔

ہاضمے کو بہتر بنائے
غذا میں کشمش کا اضافہ نظام ہاضمہ کو صحت مند رکھنے کا ایک بہت آسان طریقہ ہے، کیونکہ اس سے مددگار حل پذیر فائبر موجود ہوتا ہے جو قبض کی روک تھام یا اس سے نجات میں مدد دے سکتا ہے۔ ہاضمہ بہتر ہوگا تو آپ ہر طرح کے کھانے کو آسانی سے ہضم بھی کرسکیں گے۔

خون کی کمی یا انیمیا کی روک تھام
یہ مزیدار میوہ خون کی کمی کی روک تھام میں بھی کردار ادا کرسکتا ہے، اس میں آئرن، کاپر اور ایسے وٹامنز موجود ہوتے ہیں جو خون کے سرخ خلیات بنانے کے لیے ضروری ہیں اور آکسیجن کو پورے جسم میں پہنچاتے ہیں۔

تیزابیت سے تحفظ
کشمش میں آئرن، کاپر، میگنیشم اور پوٹاشیم کی شکل میں ایسے فائدہ مند منرلز موجود ہیں جو معدے میں تیزابیت کو توازن میں رکھنے میں مدد دیتے ہیں۔

امراض قلب سے تحفظ
ایک تحقیق میں بتایا کہ کشمش کھانا معمول بنانے سے دل کی جانب جانے والی شریانوں کو لاحق ہونے والے خطرات جیسے بلڈ پریشر ریٹ میں کمی آتی ہے، اس کی وجہ یہ ہے کہ کشمش میں نمکیات کی مقدار بہت کم ہوتی ہے جبکہ یہ پوٹاشیم کے حصول کا اچھا ذریعہ ہے جو خون کی شریانوں کو سکون پہنچاتا ہے۔

کینسر کے خلیات سے لڑے
کشمش اینٹی آکسائیڈنٹس کے مرکبات کے حصول کا بھی اچھا ذریعہ ہے، غذائی اینٹی آکسائیڈنٹس سے جسم کو تکسیدی تناﺅ اور فری ریڈیکلز سے تحفظ مل سکتا ہے۔ تکسیدی تناﺅ اور فری ریڈیکلز متعدد اقسام کے کینسر، رسولی کی نشوونما اور بڑھاپے کا باعث بننے والے اہم ترین عناصر ہیں۔

آنکھوں کی صحت کو تحفظ
کشمش میں موجود پولی فیونلز ایسے اینٹی آکسائیڈنٹس ہیں جو آنکھوں کے خلیات کو نقصان سے بچا سکتے ہیں، اس سے آنکھوں کو مختلف امراض جیسے عمر بڑھنے کے ساتھپ پٹھوں میں آنے والی تنزلی اور موتیے کا خطرہ کم ہوتا ہے۔

جلد کی صحت میں بہتری
کشمش کھانے کی عادت جلد میں موجود خلیات کو جوان رکھنے میں مدد دے سکتی ہے اور عمر بڑھنے سے خلیات کو پہنچنے والے نقصان کی روک تھام کرتی ہے، کشمش میں وٹامن سی، سیلینیم اور زنک ہوتے ہیں، یہ غذائی اجزا اور اینٹی آکسائیڈنٹس کا امتزاج جلد کی صحت کے لیے مددگار اضافہ ثابت ہوسکتے ہیں۔

بلڈ شوگر میں کمی
ایک تحقیق میں بتایا گیا کہ دیگر چیزوں کے مقابلے میں کشمش کھانا معمول بنانے سے بلڈ شوگر کی سطح میں کمی آسکتی ہے، حالانکہ کشمش میں تازہ پھلوں کے مقابلے میں مٹھاس زیادہ ہوتی ہے۔

کیا کشمش کھانے سے کوئی نقصان ہوتا ہے؟
ویسے تو کشمش کھانا مجموعی طور پر فائدہ مند ہی ہوتا ہے مگر کئی بار یہ نقصان دہ بھی ہوسکتا ہے۔

مثال کے طور پر جو لوگ کیلوریز میں کمی لانا چاہتے ہیں انہیں زیادہ مقدار میں کشمش کھانے سے گریز کرنا چاہیے، ایک کشمش میں ایک انگور جتنی ہی کیلوریز ہوتی ہیں اور یہی وجہ ہے کہ لوگ بہت آسانی سے بہت زیادہ کھا کر زیادہ کیلوریز جزوبدن بناسکتے ہیں۔

بہت زیادہ کشمش کھانے سے ایک اور مسئلہ بھی ہوسکتا ہے اور وہ ہے بہت زیادہ فائبر جسم میں پہنچ جانا، جو نظام ہاضمہ کے مسائل جیسے درد، گیس اور پیٹ پھولنے کا باعث بن سکتا ہے، کچھ لوگوں کو تو ہیضے کی شکایت بھی ہوسکتی ہے، مگر یہ خیال رہے کہ ایسا اسی وقت ہوتا ہے جب زیادہ مقدار میں کشمش کو کھایا جائے۔

ایک اور مسئلہ یہ ہے کہ اس کا حجم چھوٹا ہوتا ہے جس کے نتیجے میں یہ کھانے کے دوران حلق میں پھنس سکتی ہے خصوصاً چھوٹے بچوں میں یہ مسئلہ درپیش ہوسکتا ہے، جن کو اس میوے سے دور رکھنا چاہیے۔

آسان الفاظ میں کشمش کھائیں مگر اعتدال میں رہ کر کھائیں اور بس۔

About قومی مقاصد نیوز

تبصرہ کریں

آپ کی ایمیل یا ویبشایع نہیں کی جائے گی. لازمی پر کریں *

*

Translate »